Home / 2011 / August

Monthly Archives: August 2011

مباہلہ کا ایک اور ڈرامہ

جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ الیاس ستار سے مباہلہ کر کے مرزا طاہر احمد صاحب چل بسے۔  مگر جماعت احمدیہ کا مباہلہ کا شوق کم نہیں پڑا۔  باتیں تو بہت بناتے ہیں مگر ناپ تول کر قدم رکھتے ہیں۔  اب دیکھیے ذرا فلسطین میں کیا واقعہ گزرا:

فلسطین میں عرب قادیانی شریف عودہ صاحب کی ایک مقامی ٹی وی چینل پر ایک مسلمان عالم سے بحث ہو گئی۔  اس عالم نے ان کی باتوں سے سٹپٹا کر کہہ دیا کہ دیکھ لیں گے۔ قادیانی مربی شمس الدین نے خوب دعا کی درخواستیں کیں اور ہر ملک میں چرچا کیا۔

اب بقول شمس الدین صاحب کے، مرزا مسرور صاحب کی ہدایت پر دو قادیانی لوگ مفتی صاحب کے دفتر پر گئے اور ان سے تحریر کروانا چاہا۔  یہ ہے بات فروری ۲۰۱۱ کی۔  ابھی ایک سال میں چار ماہ باقی تھے۔  مفتی صاحب نے کہا کہ لکھنا کچھ نہیں، مگر آپ گواہ ہیں۔ میں قائم ہوں۔

اب پھر دعاء کا سلسلہ شروع ہوا، مگر کوئی بات منظر عام پر نہیں آئی، سب خاموشی سے خطوط آتے جاتے رہے، اور وہ ہم تک بھی پہنچتے رہے۔

اب اللہ کی شان دیکھیے کے شریف عودہ کی ایم ٹی اے ۳ ، جو کہ قادیانی جماعت کا عربی چینل ہے ، کی ای میل کا خزانہ ان کے قابو سے نکل گیا اور مارچ اور اپریل ۲۰۱۱ میں عربی چینل اور ان کی خط و کتابت منظر عام پر آنے سے پتہ چل گیا کہ عربی پروگرام ان کے زیادہ تر دھوکہ اور دجل پر مبنی ہیں۔ نہ صرف یہ بلکہ یہ لوگ عربی چینل پر وعظ کر رہے تھے کہ کسی بھی حکومت کے خلاف آواز اٹھانا ان کے اسلام کے خلاف ہے اور یہ جو عرب بہار ہے یہ ناجائز ہے۔  اس میں بھی قدرت نے ان کو سبکی اٹھانے کا موقعہ دیا اور یہ چیختے رہ گئے مگر مطلق العنان عرب سرداروں کی پگڑیاں گرنے لگیں۔ اور کس کو ذلت کہیں گے؟

اب جون ۲۰۱۱ نکل گیا مگر کچھ نہیں ہوا۔ اور پھر مرزا صاحب خاموش ہو کر بیٹھ گئے۔  کیا یہ ہوتا ہے مباہلہ؟ Read More »

English Website